1,181

فاطمہ جناح وویمن یونیورسٹی ملازمین کاایکا، ریلی نکالی، 13جون کا الٹی میٹم

راولپنڈی (خان گلزار حسین سے )فاطمہ جناح وویمن یونیورسٹی کے گیارہ ملازمین کو معطل کیے جانے اور انکے خلاف ملازمت سے برطرفی کے قانون کے تحت کارروائی پر یونیورسٹی کے دیگر ملازمین ہم نہیں مانتے ظلم کے ضابطے کے نعرے لگاتے ہوئے اپنے اپنے دفاتر سے نکل آئے ، یونیورسٹی کے اندر احتجاجی ریلی نکالی، انتظامیہ کے خلاف شدید نعرے بازی کی، کام کا مکمل بائیکاٹ کیااور اعلان کیاکہ اگریونیورسٹی انتظامیہ نے انتقامی کارروائیوں کا سلسلہ بند کرکے معطل ملازمین کو بحال نہ کیاتوپھر 13جون کویونیورسٹی کے ملازمین سڑک پر نکل جائیں گے ، یونیورسٹی کے باشدید احتجاج ہوگا، دوسری جانب ایپکا کے سینئر راہنمائوں نے کمشنر اور ڈپٹی کمشنر راولپنڈی کو یونیورسٹی کی جانب سے انتقامی کاروائیوں پر اپنے تحفظات سے آگاہ کرکے فوری مداخلت کی اپیل کردی۔گذشتہ روز فاطمہ جناح وویمن یونیورسٹی میں اس وقت افراتفری کی سی صورت حال پیدا ہوگئی




جب یونیورسٹی کے ہر ڈیپارٹمنٹ سے ملازمین نعرے بازی کرتے ہوئے اپنے اپنے دفاتر سے نکل آئے ، ملازمین کے ساتھ درجہ چہارم کے ملازمین بھی شامل تھے ، اس احتجاج نے ریلی کی شکل اختیار کرلی، ملازمین نے ریلی کے دوران ہم نہیں مانتے ظلم کے ضابطے ، معطل ملازمین کو بحال کرو، انتقامی کاروائیاں بند کرو کے نعرے لگائے ، ملازمین نے یونیورسٹی کا چکر لگایا، اور کام بند کیے رکھا، اس موقع پر مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے قائدین کاکہناتھاکہ اگر معطل ملازمین کو بحال نہ کیاگیاتو پھر تیرہ جون کو یونیورسٹی گیٹ سے باہر احتجاج کریں گے ، دھرنادیںگے ، اور یونیورسٹی کو بند کروادینگے ، ملازمین کی حق تلفی کسی صورت منظور نہیں ، انتظامیہ کو اپنی ہٹ دھرمی سے پیچھے ہٹنا ہوگا، ادھر ایپکا کے ڈویژنل صدر چوہدری وحید مراد، ڈویژنل جنرل سیکرٹری واجد عباسی سمیت دیگر قائدین نے کمشنر راولپنڈی اور ڈپٹی کمشنر راولپنڈی سے الگ الگ ملاقات کی انھیں یونیورسٹی انتظامیہ کی جانب سے معطل کیے جانے والے گیارہ ملازمین کے کیس بارے آگاہ کیا، اور بتایاکہ مہنگائی کے خلاف ہونے والے احتجاج کی پاداش میں یونیورسٹی انتقامی کارروائی کررہی ہے ،




بغیر کسی قواعد وضوابط کے ملازمین کو معطل کرکے اب پیڈا ایکٹ لگادیاگیاہے ، اییکا پاکستان کو اس پر شدید تحفظات ہیں لہذا فوری مداخلت کی جائے ، دوسری صورت میں حالات مزید خراب ہوجائینگے ، واجد عباسی کے مطابق دونوں افسران نے معاملے کوسلجھانے کی یقین دہانی کروائی ، اس لیے ہم انتہائی قدم اٹھانے سے گریز کررہے ہیں ، توقع ہے کہ جلد ہی یہ مسلہ حل ہوجائے گا، دوسری جانب یونیورسٹی انتظامیہ نے جمعہ کے روز احتجاج کرنے والے دیگر ملازمین کی لسٹیں بھی تیار کرلی ہیں ، اس معاملے میں یونیورسٹی انتظامی پوسٹوں پر تعینات ایک میل اور فی میل آفیسر ملازمین کو دھمکاتے رہے کہ کسی کو نہیں چھوڑیں گے ، سب کو نوکری سے نکال دیاجائے گا صرف وہی رہے گا جو یس سر کہناجانتااور اس پر عمل کرے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں