1,097

آئی جی پنجاب نے پولیس ملازمین اور انکے بچوں کے لئے ویلفیئر کی رقم بڑھا دی

اسلام آباد ( سی این پی ) انسپکٹر جنرل آف پولیس پنجاب راؤ سردار علی خان نے کہاہے کہ پولیس ملازمین کی بہترین ویلفیئر بالخصوص شہدائے پولیس کی فیملیز کی بھرپوردیکھ بھال اور انکی ہر ممکن ویلفیئرمیری اولین ترجیح ہے اسی لئے پنجاب پولیس نے اپنے وسائل میں رہتے ہوئے فورس کیلئے ویلفیئرپیکج2022کی منظوری دی ہے۔ آئی جی پنجاب نے کہاکہ اس پیکج کے تحت پنجاب پولیس کے ملازمین و افسران کو ریلیف حاصل ہوگا جو اپنی بچوں کی تعلیم، میڈیکل اوردیگر اخراجات کیلئے محکمہ سے بوقت ضرورت تعاون حاصل کرسکیں گے۔ ترجمان پنجاب پولیس نے بتایا کہ آئی جی پنجاب کے حکم پر ایڈیشنل آئی ویلفیئر ایند فنانس محمدفاروق مظہر کی زیر قیادت کمیٹی نے سال 2016 کے ویلفیئر رولز میں ترامیم کرکے پولیس ملازمین اور انکے بچوں کی تعلیم، میڈیکل، بیٹیوں کے جہیز، گذاراالاؤنس سمیت دیگر کیٹیگریز پرمالی امداد میں اضافے پر ایک جامع ڈرافٹ تیار کیا جس کی منظوری پروانشل ویلفیئربورڈ کی تجاویزپر انسپکٹر جنرل آف پولیس پنجاب راؤ سردار علی خان نے دے دی۔ یہ ترامیم یکم جنوری 2022 سے لاگو کی جائیں گی جس سے پولیس افسران و ملازمین کو تاریخی ریلیف ملے گا۔




پنجاب پولیس کے ویلفیئرپیکج2022میں کئی گئی ترامیم بارے ترجمان پنجاب پولیس نے بتایا کہ نئے پیکج میں اہلکاروں و افسران کیلئے جہیز فنڈز،تعلیمی سکالرشپ،میڈیکل فنانشل امداد اورگزارا الاؤنس میں اضافہ کیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ گریڈ 1تا 16 کے حاضر سروس/ریٹائرڈ ملازمین کی بیٹیوں کی شادی کے جہیز پیکج میں اضافہ کیا گیا ہے اور جہیز فنڈ کی رقم 40ہزار سے بڑھا کر 60ہزار کر دی گئی۔ اگر کسی ملازم کی 1 یا 2 بیٹیاں ہوں تو اسے 80 ہزار روپے فی کس کے حساب سے فنڈ ملیں گے۔گریڈ 17 اور اس سے اوپر کے حاضرسروس/ریٹائرڈ ملازمین/افسران کی بیٹیوں کی شادی کے جہیز پیکج میں بھی اضافہ کیا گیا ہے اور اس کیٹیگری میں جہیز فنڈ کی رقم50ہزار سے بڑھا کر 70ہزار کر دیگئی ہے۔ اگر کسی کی 1 یا 2 بیٹیاں ہوں تو اسے ایک لاکھ روپے فی کس کے حساب سے فنڈ ملیں گے۔اسی طرح شہداء اور دوران سروس وفات پانے والے ملازمین کی بیٹیوں کے جہیز کے لیے 60 ہزار فی کس سے رقم بڑھا کر 70 ہزار فی کس کر دی گئی ہے جبکہ اگر کسی کی 1 یا 2 بیٹیاں ہوں تو اسے ایک لاکھ روپے فی کس کے حساب سے فنڈ ملیں گے۔




تعلیمی سکالرشپ میں اضافے کی تفصیلات بارے انہوں نے بتایا کہ پنجاب پولیس کے گریڈ 1تا 16 کے ملازمین کے بچوں کے لیے انٹرمیڈیٹ تعلیم کے لیے 9 ہزار سالانہ سے بڑھا کر 15ہزار کر دیئے گئے ہیں۔گریڈ 17 اور اس سے اوپر کے افسران کے بچوں کے لیے انٹرمیڈیٹ تعلیم کے لیے 20ہزار کر دیئے گئے ہیں۔اسی طرح گریڈ 1تا 16 کے ملازمین کے بچوں کے لیے دو سالہ گریجویشن پروگرام بی اے/بی ایس سی کے لیے 11 ہزار سالانہ سے بڑھا کر 20ہزار کر دیئے گئے ہیں۔گریڈ 17 اور اس سے اوپر کے افسران کے بچوں کے لیے دو سالہ گریجویشن پروگرام بی اے/بی ایس سی کے لیے 25ہزار کر دیئے گئے ہیں۔ایم اے، ایم ایس سی، بی ایس سی(چارسالہ) اور ایم فل کے لیے 15 ہزار سے بڑھا کر 40ہزار اوسطاً کر دیئے گئے ہیں جبکہپی ایچ ڈی کے لیے 15 ہزار سالانہ سے بڑھا کر ڈیڑھ لاکھ روپے اورریاضی میں پی ایچ ڈی کرنے والوں کو اڑھائی لاکھ روپے سالانہ ملیں گے۔اسی طرح انجینئرنگ اور میڈیکل کی سرکاری یونیورسٹیوں سے تعلیم حاصل کرنے پر مکمل فیس ادا کی جائے گی۔پرائیویٹ جامعات میں میڈیکل،انجینئرنگ، آئی ٹی اور بزنس کے لیے جامعات کی کیٹیگری کو اوپن کر دیا گیا ہے۔اب انجینئرنگ، میڈیکل، آئی ٹی اور بزنس میں ایچ ای سی رینکنگ کے مطابق پاکستان اور پنجاب کی ٹاپ فائیو جامعات میں داخلہ لینے والے بچوں کی ٹیوشن فیس، رجسٹریشن، داخلہ فیس کے علاوہ 20ہزار کتابوں کے لیے بھی مل سکیں گے۔ پولیس ملازمین/افسران کے بچوں کو قرآن پاک حفظ کرنے پر ایک لاکھ روپے انعام دیا جائے گا۔پولیس ملازمین/افسران کو کسی موضوع پر کتاب لکھنے پر ایک لاکھ سے پانچ لاکھ تک انعام دیا جائے گا لیکن انعام کی اہلیت کا تعین مینجمنٹ کمیٹی کرے گی۔دینی جامعات سے ایسی ڈگریاں حاصل کرنے پر جو ایچ ای سی کے ڈگری پروگرام سے منظور ہیں کو ریگولر ڈگری تصور کرتے ہوئے یونیورسٹیز والی مالی امداد مہیا کی جائے گی۔انٹری ٹیسٹ امتحانات مثلاََجی آر ای، ٹوفل، گیٹ اور دیگر 9 کٹیگری میں 80 فیصد سے زائد نمبر حاصل کرنے پر ٹیسٹ فیس ادا کی جائے گی۔پولیس ملازمین/افسران کے بچوں کو سول سروس (سی ایس ایس، پی ایم ایس اور جوڈیشری) اور آرمڈ فورسز (آرمی، نیوی، ایئر فورس) بطور کمیشنڈ افسر جوائن کرنے پرایک لاکھ روپے انعام دیا جائے گا۔گریڈ 1تا 5 کے ملازمین کے بچوں کو میٹرک کی تعلیم حاصل کرنے پر 5 ہزار روپے انعام دیا جائے گا۔




میڈیکل فنانشل امداد میں ہونے والے اضافے بارے انہوں نے بتایا کہ دل کی بیماریوں کے علاج کیلئے مالی امداد ایک لاکھ 25ہزار سے بڑھا کر 2لاکھ کردی گئی ہے۔ اوپن ہارٹ سرجری پر افسران و اہلکاروں کو 2لاکھ روپے جبکہ بیوی، بچوں کوایک لاکھ روپے دئیے جائیں گے۔سٹنٹ ڈلوانے پر افسران و اہلکاروں کوایک لاکھ روپے جبکہ بیوی، بچوں کوپچاس ہزار روپے دئیے جائیں گے۔اسی طرحکینسر سے متعلقہ بیماریوں کے علاج کیلئے مالی امداد ا2 لاکھ 25ہزار سے بڑھا کر5لاکھ کردی گئی ہے۔کینسر ٹیومر کے علاج کیلئے پولیس ملازمین کو2لاکھ روپے جبکہ بیوی اور بچوں کو ایک لاکھ روپے دئیے جائیں گے جبکہمہلک کینسر کے علاج کیلئے پولیس ملازمین کو5لاکھ روپے جبکہ بیوی اور بچوں کو دو لاکھ50ہزار روپے دئیے جائیں گے۔میڈیکل امداد کی کیٹیگری میں بون میرو ٹرانسپلانٹ کا اضافہ کردیا گیا۔ ملازمین کو 10لاکھ جبکہ بیوی بچوں کو پانچ لاکھ دئیے جائیں گے جبکہ دیگر بیماریوں کے علاج کیلئے دی جانے والی امدادمیں بیوی بچوں کیلئے20ہزار کا اضافہ، 70ہزار دئیے جائیں گے۔گزارا الاؤنس کی کیٹیگری میں ملنے والی امدا دمیں بھی اضافہ کردیا گیا ہے اور اب گریڈ 20یا اس سے اوپر افسران کی بیوائیں بھی گذارا الاؤنس حاصل کرسکیں گی۔ترجمان پنجاب پولیس نے بتایا کہ گریڈ 20یا اس سے اوپر افسران کی بیواؤں کیلئے گذارا الاؤنس32ہزار جبکہ فی بچہ امدادی رقم3500دئیے جائیں گے۔ گریڈ 18اور19افسران کی بیواؤں کیلئے گذارا الاؤنس20ہزار سے بڑھاکر22ہزار جبکہ فی بچہ امدادی رقم2ہزار سے بڑھا کر 2500کردی گئی۔ گریڈ 16اور17کے افسران کی فیملیز کیلئے گذارا الاؤنس10ہزار سے بڑھاکر12ہزار جبکہ فی بچہ امدادی رقم1500 سے بڑھاکر2000 کردی گئی۔گریڈ 11اور15کے ملازمین کی فیملیز کیلئے گذارا الاؤنس 8ہزار سے بڑھاکر10ہزار جبکہ فی بچہ امدادی رقم1200 سے بڑھاکر1700 کردی گئی۔گریڈ 1اور9کے ملازمین کی فیملیز کیلئے گذارا الاؤنس6ہزار سے بڑھاکر8ہزار جبکہ فی بچہ امدادی رقم1000 سے بڑھاکر1500 کردی گئی۔ ترجمان پنجاب پولیس نے بتایا کہ ویلفیئر پیکچ میں اضافہ پنجاب پولیس نے اپنے وسائل کے اندر رہتے ہوئے کیا ہے اور اس کا مقصد سپاہ کو ہر ممکن ریلیف فراہم کرنا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں