1,173

راولپنڈی رنگ روڈ اسکینڈل کی نئی تحقیقات کا حکم . تہلکہ خیز انکشافات

اسلام آباد( سی این پی ) وزیراعظم عمران خان نے راولپنڈی رنگ روڈ منصوبہ اسکینڈل کی مکمل تحقیقات کا حکم دے دیا۔

اس کے بعد حکومت پنجاب نے تفتیش کے لیے مذکورہ کیس وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) اور قومی احتساب بیورو (نیب) کو بھجوانے کا فیصلہ کرلیا۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق یہ فیصلہ وزیرعظم کے دفتر پہنچنے والی 2 حقائق تلاش کرنے والی رپورٹس پر کیا گیا جس میں ایک راولپنڈی کے کمشنر اور دوسری ڈپٹی کمشنر نے تیار کی تھی۔

دوسری رپورٹ میں اشارہ دیا گیا تھا کہ مذکورہ منصوبہ وزیراعلیٰ عثمان بزدار اور ان کے مشیر خزانہ ڈاکٹر سلمان شاہ کی منظوری سے ری الائن کیا گیا تھا۔

تاہم پاکستان مسلم لیگ (ن) نے رنگ روڈ منصوبے کی ری الائمنٹ منظور کرنے پر متعلقہ حکام کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا اور اس بات پر زور دیا کہ اس سے نہ تو وزیراعظم عمران اور وزیراعلیٰ عثمان بزدار اور نہ ہی اس سے براہِ راست ‘مستفید ہونے والے’ غلام سرور خان اور زلفی بخاری کو استثنٰی دیا جاسکتا ہے۔





کمشنر کی رپورٹ میں کچھ نجی ہاؤسنگ سوسائیٹیز کے نام دیے گئے تھے جو رنگ روڈ کے اصل پلان سے بہت دور تھیں لیکن ری الائنمنٹ سے انہیں فائدہ پہنچایا گیا۔

رپورٹ میں الزام عائد کیا گیا کہ سابق کشمنر کیپٹن (ر) محمود اور معطل ہونے والے لینڈ ایکوزیشن کمشنر وسیم تابش نے روڈ کے لیے زمین کے حصول کی غرض سے غلط طور پر 2 ارب 30 کروڑ کا معاوضہ ادا کیا اور اراضی حاصل کرتے ہوئے سنگ جانی کے معروف خاندان کو فائدہ پہنچایا۔

یہ بات سامنے آئی کہ سابق کشمنر نے مارکیٹ کی قیمت سے کم نرخ کی پیش کش کی تھی جس کی وجہ سے مالکان اپنی اراضی دینے سے گریزاں تھے۔




اس کے علاوہ یہ بات بھی سامنے آئی کہ نیسپاک نے سال 2017 میں روڈ کو ٹی چوک روات سے مرات تک منسلک کیا تھا لیکن آئندہ برس ایک اور کنسلٹنٹ نے روڈ کو ٹی چوک سے اسلام آباد-لاہور موٹروے (ایم-) سے متصل کرنے کی تجویز دی جس کی 2021 میں نیسپاک نے اسے بہترین قرار دیتے ہوئے دوبارہ توثیق کی تھی۔

تاہم یہاں یہ سوالات پیدا ہوتے ہیں کہ ایک منصوبے میں صور 2 عہدیدار کس طرح کچھ غلط کرسکتے ہیں جبکہ تمام منظوریاں اور رضامندی متعلقہ حکام کی جانب سے دی گئیں ہوں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں