1,114

پیشہ ور ضمانتیوں کو بلیک لسٹ کرنے کا فیصلہ ۔فہرستیں طلب

لاہور( سی این پی ) انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب انعام غنی نے کہاہے کہ تمام آ رپی اوز، ڈی پی اوز سمیت دیگر کمانڈ افسران اپنے اضلاع کے مالی معاملات کے کیسز انتہائی شفاف اور درست رکھیں کیونکہ کسی بھی ضلع سے مالی بے ضابطگی کا کوئی کیس سامنے آیا تو میں اسے تحقیقات کیلئے نیب کو بھجوانے میں ذرہ بھر ہچکچاہٹ کا مظاہر ہ نہیں کروں گا۔ انہوں نے مزیدکہاکہ ڈی پی اوزمالی معاملات کی کلوزمانیٹرنگ کیلئے آئی ٹی برانچ کے ڈیزائن کردہ فنانس سافٹ وئیر سے بھرپور استفادہ کو یقینی بنائیں جبکہ اکاؤنٹنٹس کے بارے میں آر پی اوز کو بھجوائے گئے لیٹرز ضلع میں بھیجنے کی بجائے ان کی انکوائری آر پی او آفس میں کی جائے اور قصور وار ثابت ہونے والے اکاؤنٹنٹس کو تبدیل کرکے نہ صرف ضلع بدر کیا جائے بلکہ انکے خلاف محکمانہ کاروائی




میں بھی تاخیر نہ کی جائے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ کرپشن اور اختیارات سے تجاوز کرنے والوں کی فورس میں کوئی جگہ نہیں اور انکے خلاف کارروائیاں ترجیحی بنیادوں پر جاری رہیں گی۔ انہوں نے مزیدکہاکہ پیشہ ور ضمانتیوں کا ریکارڈ اکٹھا کرکے انکے محاسبے اور بلیک لسٹ کرنے کیلئے سیشن ججوں کو خطوط بھجوائے جائیں تاکہ ان کے خلاف قانونی کارروائی کو یقینی بنایا جا سکے۔انہوں نے مزیدکہاکہ سنٹرل پولیس آفس کو جرائم بارے غلط اعدادو شمار بھجوانے والے سی پی اوز اور ڈی پی اوز کو وضاحتی لیٹرز جاری کئے جائیں گے اور تسلی بخش جواب نہ دینے پر ذمہ داران کے خلاف کاروائی میں تاخیر نہ کی جائے۔ انہوں نے ڈی آئی جی آئی ٹی کو ہدایت کی کہ قومی شناختی کارڈ نہ رکھنے والے اشتہاری مجرمان کاڈیٹا ریکارڈ سسٹم میں داخل نہ کیا جائے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ کرسمس پر زہریلی اور کچی شراب کی خریدوفروخت اور استعمال میں ملوث عناصر کے خلاف سخت کاروائی میں تاخیر نہ کی جائے جبکہ نیو ائیر نائٹ پر ون ویلنگ اور ہوائی فائرنگ کرنے والوں کے خلاف زیروٹالرینس کے تحت کاروائی کویقینی بنایا جائے اور عادی ون ویلرز کے والدین سے شورٹی بانڈز لئے جائیں کہ ان کے بچے ون ویلنگ کی کسی غیر قانونی سرگرمی کا حصہ نہیں بنیں گے۔انہوں نے مزیدکہاکہ ساؤنڈ ایکٹ کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف کاروائی میں تاخیر نہ کی جائے اور تمام اضلاع میں




نیشنل ایکشن پلان کے تحت وضع کردہ قوانین پر سختی سے عمل درآمد یقینی بنایا جائے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ کرسمس کی آمد کے پیش نظر صوبہ بھر میں کرسچن کمیونٹی اور ان کے مذہبی مقامات کے علاوہ تفریحی مقامات کے تحفظ کیلئے آر پی اوز اورڈی پی اوز اپنی نگرانی میں سیکیورٹی پلان تیار کروائیں تاکہ مسیحی کمیونٹی بلا خوف وخطر پر امن ماحول میں اپنے مذہبی تہوار کو جوش و جذبے کے ساتھ منا سکیں۔انہوں نے مزیدکہاکہ اے کیٹیگری کے گرجا گھروں میں داخلے کیلئے سی سی ٹی وی کیمروں، میٹل ڈٹیکٹرز اور واک تھرو گیٹس سے چیکنگ کو ہرصورت یقینی بنایا جائے جبکہ حساس گرجا گھروں کے علاوہ پارکوں اور پبلک مقامات کے گردو نواح میں ٹریفک کی بلا تعطل روانی کو برقرار رکھنے کیلئے ٹریفک پولیس کی اضافی نفری تعینات کی جائے اورشہریوں کی سہولت کیلئے ڈولفن، پیرو سمیت دیگر پٹرولنگ فورسزکے گشت کے اوقات کار کو مزید موثر بنایا جائے۔یہ ہدایات انہوں نے آج سنٹرل پولیس آفس میں منعقدہ ویڈیو لنک کانفرنس کے دوران صوبے کے تمام آر پی اوز، ڈی پی اوز سے خطاب میں جاری کیں۔ا س موقع پر سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہداء کے درجات کی بلندی کیلئے فاتحہ خوانی بھی کی گئی۔ آئی جی پنجاب نے جرائم کنٹرول کرنے میں گوجرانوالہ، ملتان، خانیوال، وہاڑی، ساہیوال، اوکاڑہ، فیصل آباد، چکوال، اٹک اور ڈیرہ غازی خان کی کارکردگی کو سراہتے ہوئے یہی کارکردگی برقرار رکھنے کی ہدایت کی تا کہ عوام کی جان و مال کے تحفظ کا عمل مزید بہتر ہو اورجرائم کی شرح میں مزید کمی لائی جا سکے۔




کانفرنس میں تمام آر پی اوز اور ڈی پی اوز نے اپنے اپنے ریجنز اور اضلاع میں جرائم کی روک تھام اورمجموعی کارکردگی بارے بریفنگز پیش کیں جس پر آئی جی پنجاب نے ہدایات دیتے ہوئے کہا کہ معاشرے میں قانون کی حکمرانی برقرار رکھنے کیلئے جرائم کنٹرول کرنے کی کاوشوں کے ساتھ ساتھ مقدمات کو ورک آؤٹ کرنے کی شرح کو بھی بہتر سے بہتر کیا جائے جبکہ قتل، ڈکیتی اور اغوا برائے تاوان میں ملوث ملزمان کی گرفتاری کیلئے جدیدٹیکنالوجی سے بھرپور استفادہ کیا جائے۔انہوں نے تاکید کی کہ خواتین اور بچوں کے ساتھ پیش آنے والے جرائم کی روک تھام کیلئے تمام آر پی اوز اور ڈی پی اوز بروقت اقدامات کے علاوہ ان مقدمات کی تفتیش اپنی نگرانی میں کروائیں جبکہ قتل، زیادتی سمیت دیگر سنگین جرائم کی تفتیش کیلئے جیو فینسنگ، فارنزک سائنس اور جدید انویسٹی گیشن ٹولز سے بطور خاص استفادہ کیا جائے تاکہ ان جرائم میں ملوث ملزمان کو کیفر کردار تک پہنچانے کا عمل تیز سے تیز تر ہوسکے۔انہوں نے تاکید کی کہ صوبہ بھر میں اشتہاری ملزمان، عدالتی مفروروں اور سماج دشمن عناصر کے خلاف کاروائیوں میں مزید تیزی لائی جائے اور بڑے بدمعاشوں اور منشیات فروشوں کی گرفتاری کیلئے کریک ڈاؤن مزید تیزی لائی جائے۔آئی جی پنجاب نے آر پی اوز کانفرنس کی تیاری اور انعقاد میں ایڈیشنل آئی جی انویسٹی گیشن کی کاوشوں کو بہت سراہا۔ انہوں نے مزیدکہا کہ




منشیات فروشی کے مکروہ دھندے میں ملوث مجرمان معاشرے کا ناسور ہیں جنہیں جڑ سے اکھاڑکر کیفر کردار تک پہنچانے کیلئے انفارمیشن بیسڈ انٹیلی جنس آپریشنز کو جاری رکھا جائے اور بڑے مگرمچھوں کے ساتھ ساتھ چھوٹے ڈیلرز کے صفایا کو بھی یقینی بنایاجائے۔کانفرنس میں ایڈیشنل آئی جی اسٹیبلشمنٹ اظہر حمید کھوکھر،ایڈیشنل آئی جی انویسٹی گیشن فیاض احمد دیو، ایڈیشنل آئی جی، آپریشنز پنجاب، صاحبزادہ شہزاد سلطان،سی سی پی او لاہور، عمر شیخ، ڈی آئی جی ہیڈ کوارٹرز،سید خرم علی، ڈی آئی جی آئی ٹی، وقاص نذیر اور ڈی آئی جی آر اینڈ ڈی، شاہد جاویدسمیت دیگر افسران بھی موجود تھے۔
٭٭٭٭٭

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں